Breaking News

ایک برقع میں ملبوس خاتون نے رات کے وقت ایک ٹیکسی ڈرائیور کو روکا اور بولی کہ ۔۔۔؟

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) وہ ایک عام سا آدمی تھا اور خاصی مدت سے ایک عرب ملک میں مقیم تھا ۔ اس کے بیوی بچے اس کے پاس تھے ۔ محدود آمدنی کے باوجود وہ اپنی زندگی سے خاصا مطمئن تھا۔ اس کا گھر، اس کی محبت کرنے والی بیوی اور بچے تھے ۔ مستقبل کی ذمہ داریوں کے احساس نے اسے مجبور کیا۔

کہ وہ ٹیکسی چلایا کرے تاکہ آمدنی میں اضافہ ہواور پھر وہ ٹیکسی ڈرائیور بن گیا۔ ایک دن معمول کے مطابق ٹیکسی لے کر نکلا، سواری کے انتظار میں تھا۔ مغرب کا وقت تھا۔ کہ برقع میں ملبوس ایک عورت نے ٹیکسی کا اشارہ کیا۔ اس نے ٹیکسی روک لی۔ عورت نے کہا کہ فوری طور پر ہسپتال کے ایمرجینسی وراڈ میں لے چلو۔ میں زچگی کی حالت میں ہوں ۔ اس نے ٹیکسی دوڑائی اور فوری طور پر ہسپتال پہنچ گئے۔ عورت نے کہا تھوڑ ی دیر بعد انتظار کرو۔ نرسیں اس کو لیبر وارڈ میں لے گئیں۔ ادھر ہسپتال کے ایک ملازم نے ڈرائیور سے پوچھا کہ اس کا ایڈریس اور فون نمبر کیا ہے اس نے معمول کا معاملہ سمجھا ۔چنانچہ وہ اپنا فون نمبر دے کر چلاگیا۔ رات کے وقت اسے ہسپتال سے فون آیا کہ تمہارے ہا ں بیٹا ہوا ہے ، لہذا فوری طور پر ہسپتال آجاؤ۔ اس نے جواب دیا کہ تمہیں غلط فہمی ہوئی ہے۔ میری ایک بیوی ہے جو گھر میں ہے ۔ ہسپتال کے ملازم نے کہا کوئی بات نہیں ، تم ایک مرتبہ آؤ ، نہایت ضرور ی ہے ۔ تھوڑی دیر بعد ٹیکسی ڈرائیور ہسپتال گیا اور سٹاف سے جھگڑا شروع کر دیا کہ تم لوگوں نے مجھ پر نہایت ہی گھٹیا الزام لگا یا ہے۔ اللہ کا شکر ہے کہ میری بیوی کو پتہ نہیں چلا۔

ورنہ گھر میں قیامت برپا ہوجاتی ہے۔ کہ میں نے ایک شادی کر رکھی ہے۔ اس نے کہا جس عورت کو تم ٹیکسی میں لے کر آئے تھے ، اس سے جب پوچھا گیا کہ تمہارا خاوند کون ہے تو اس نے تمہارا نا م لیا۔ اس عورت نے کہا کہ اس کے بچے کا باپ ٹیکسی ڈرائیور ہے ۔ اور وہی مجھے ہسپتال چھوڑ کر گیا ہے۔ نوجوان کہنے لگا کہ میں اللہ کی پناہ مانگتا ہوں ، یہ بالکل بہتان ہے یہ تو گھر بیٹھے مصیبت میرے گلے آپڑی ہے۔ اچانک اس کو خیال آیا کہ اگر تمہیں میری سچائی پریقین نہیں تو ایسا کرو کہ نومولود اور میرے خون کا ٹیسٹ لے لو۔ تمہیں پتہ چل جائے گا۔ لہذا انہوں نے اس تجویز سے اتفاق کیا۔ اور اس کے خون کا نمونہ لے لیا۔ اب وہ ٹیکسی ڈرائیور مسلسل دعائیں کرتارہا ۔ تھوڑی دیر کے بعد ہسپتال کے عملے کےڈاکٹر نتیجہ لے کر آیا اور کہنے لگا : نوجوان! ہم معذرت خواہ ہیں ، خواہ مخواہ تمہارا وقت ضائع کیا ہے۔ آپ کے خون کی تحقیق سے یہ بات سامنے آگئی ہے۔ کہ واقعی یہ آپ کا بچہ نہیں ہے۔ اور یہ بھی معلوم ہوا کہ آپ مکمل طور پر بانجھ ہیں۔ اب حیران وپریشان ہونے کی باری اس نوجوان کی تھی۔ یہ خبر سن کر اس پربجلی بن کر گری تھی۔ و ہ بولا”تمہاری یہ بات تو پہلی بات سے بھی زیادہ سخت ہے”۔

میں کئی سالوں سے شادی شدہ ہوں اورمیرے چھ بچے ہیں۔ تمہاری لیبارٹری رپورٹ بے کار ہے۔ ہم دوبارہ ٹیسٹ کرواتے ہیں۔ ٹیسٹ دوبارہ ہوا اور ڈاکٹروں نے حتمی فیصلہ دیا کہ جس شخص کا یہ خون ہے وہ کبھی باپ نہیں بن سکتا۔ مگر میرے چھ عدد ہے اور ڈاکٹروں کا یہ دعوی ٰ کہ میں باپ بن ہی نہیں سکتا۔ وہ سو چ سوچ کر پاگل ہورہاتھا۔ جانچ پڑتال شروع کی گھر کے ماحول پر غور کیا تو اس نتیجے پرپایاکہ اس کی بیوی یقیناً خائن ہے۔ مگر یہ ڈاکہ ڈالنے والا کون ہے؟ اب ایک اور تلخ حقیقت اس کے سامنے کھڑی تھی۔ اس کے قدموں تلے سے زمین نکل گئی۔ اس کا حقیقی بھائی اس سے عمر میں چھوٹا، جس کو وہ اولاد کے برابرجگہ دیتا تھا۔ اس کے گھر میں شروع سے مقیم تھا۔ اس نے موقع سے ناجائز فائدہ اٹھایا اور اپنی بھابھی کے ساتھ۔ ہاں اس کی بیوی کے ساتھ کئی سالوں سے ناجائز تعلقات قائم کر رکھے تھے۔ اور پھر شدید دباؤ کے بعد اس کی بیوی اور بھائی نے ان ناجائز تعلقات کا اعتراف کرلیا۔ ظلم کرنے والوں کے کرتوتوں سے اللہ پاک کو غافل نہ سمجھو۔ وہ تو انہیں اس دن تک مہلت دیے ہوئے ہے۔ جس دن آنکھیں پھٹی کی پھٹی رہ جائیں گی”۔ اس جرم کے حقیقی مجر م تووہ دونوں تھے مگر یہ شوہر بھی اس میں برابر کا حصہ دار تھا۔ جس نے نبی کریم ﷺ کے فرمان ذی شان پرکوئی توجہ نہ دی تھی۔ ارشاد نبوی ﷺ ہے : تم لوگ تنہائی میں عورتوں کےپاس جانے سے بچو۔ ایک آدمی نے دریافت کیا اےاللہ کے رسول ﷺ دیور کے بارے میں آپ کیا فرماتے ہیں؟ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: دیور تو موت ہے ۔ (عور ت کے حق میں عربی لغت میں شوہر کے بھائی اور اس کے قریبی رشتہ دار کو الحمو کہتے ہیں)۔

About Admin

Check Also

روزانہ چند منٹ آپ اپنی ٹانگیں اس طرح دیوار کے ساتھ رکھیں تو اس کا کیا فائدہ ہوتا ہے؟ جان کر آپ کو افسوس ہوگا کہ پہلے کسی نے کیوں نہ بتایا

اسلام آباد(نیووز ڈیسک) ورزش کرنا مشقت طلب کام ہے اور یہی وجہ ہے کہ اس …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *