Breaking News

وہ پاکستانی جس کے سوئس اکاؤنٹ میں اربوں روپے تازہ لیکس میں سامنے آگئے

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) تحقیقاتی صحافیوں کی عالمی تنظیم آرگنائزڈ کرائم اینڈ کرپشن رپورٹنگ پراجیکٹ (او سی سی آر پی)  نے سوئس بینکوں میں رکھے گئے  100 ارب ڈالر کی تفصیلات  جاری کردیں۔  جاری ہونے والے ڈیٹا میں پاکستان کرکٹ بورڈ  (پی سی بی ) کے سابق چیئرمین جنرل (ر) زاہد علی اکبر خان کا نام بھی شامل ہے۔

یہ وہ  چیئرمین پی سی بی ہیں جن کے دور میں پاکستان نے 1992 کا ورلڈ کپ جیتا تھا۔ اس کے علاوہ وہ واپڈا کے چیئرمین بھی رہ چکے ہیں۔ زاہد علی اکبر پاک فوج کی انجینئرنگ کور کا حصہ تھا جنہوں نے پاکستان کے نیوکلیئر پروگرام میں بھی حصہ لیا، انہیں سنہ 2013 میں بوسنیا کے بارڈر سے انٹرنیشنل وارنٹ کی بنا پر انٹرپول نے گرفتار کیا تھا۔ ان پر  پاکستان میں کرپشن کا الزام ہے۔ زاہد علی اکبر اپنے 77 بینک اکاؤنٹس میں موجود رقم کا حساب دینے سے قاصر رہے تھے۔ او سی سی آر پی کے ڈیٹا کے مطابق انہوں نے سوئٹزر لینڈ میں سنہ 2004 میں کاروباری بینک اکاؤنٹ کھولا   جو سنہ 2006 تک آپریشنل تھا، اس اکاؤنٹ میں ایک کروڑ 55 لاکھ 35 ہزار 345 سوئس فرینک کی رقم موجود رہی جو پاکستانی روپوں میں دو ارب 96 کروڑ روپے بنتے ہیں۔خیال رہے کہ او سی سی آر پی کی جانب سے اس ڈیٹا لیک  کو “سوئس سیکرٹس” کا نام دیا گیا ہے۔  تنظیم نے  دنیا بھر کے 47 میڈیا اداروں کے ساتھ مل کر سوئس بینکوں کی پراسرار دنیا کی تاریخ کی سب سے بڑی تحقیقات  کیں اور یہ ڈیٹا جاری کیا ہے۔ اس ڈیٹا میں سوئٹزر لینڈ سے تعلق رکھنے والی انویسٹمنٹ بینکنگ کمپنی ” کریڈٹ سوئس” کے 18 ہزار اکاؤنٹس  اور 30 ہزار اکاؤنٹ ہولڈرز کی تفصیلات شامل کی گئی ہیں جن کا تعلق 160 ممالک سے ہے۔ ان اکاؤنٹس میں زیادہ سے زیادہ 100 ارب ڈالر کی رقم جمع رہی ہے۔ اس ڈیٹا لیک میں کئی ملکوں کے حکمران خاندانوں ، خفیہ ایجنسیوں اور جرائم پیشہ افراد کے نام سامنے آئے ہیں۔

About Admin

Check Also

قبل از وقت انتخابات ہوئے تو کون سی جماعت فائدے میں رہے گی؟ سیاسی ماہرین نے عوام کو صاف صاف بتا دیا

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) پاکستان میں جاری سیاسی و معاشی بحران کے تناظر میں بعض ماہرین …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *