Breaking News

فارن فنڈنگ کا اعتراف۔۔۔ کیا پی ٹی آئی کالعدم ہونے جا رہی ہے؟ کیا عمران خان نئی پارٹی بنانے والے ہیں؟

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) فارن یا ممنوعہ فنڈنگ کا معاملہ پاکستان تحریک انصاف کیلئے سوہان روح بنا ہوا ہے، چیئرمین عمران خان سمیت پوری پارٹی ایک طرف ممنوعہ فنڈنگ سے انکاری ہے تو دوسری طرف پی ٹی آئی کے وکیل انور منصور نے الیکشن کمیشن کے سامنے پی ٹی آئی کی ممنوعہ فندنگ کا اعتراف کر لیا ہے۔

تحریک انصاف کے بانی رکن اکبر ایس بابر نے نومبر 2014 میں پارٹی میں غیر ملکی فنڈنگ کا معاملہ اٹھایا اور الیکشن کمیشن کو پارٹی میں اندرونی مالی بے ضابطگیوں کا نوٹس لینے کیلئے درخواست دی-جس میں انہوں نے مؤقف اختیار کیا کہ تحریک انصاف نے ممنوعہ ذرائع سے فنڈز وصول کرکے لاکھوں ملین ڈالرز کی بذریعہ ہنڈی منتقلی کے لیے 2 آف شور کمپنیوں کا نام استعمال کیا۔ اکبر ایس بابر کے مطابق تحریک انصاف کے بینک اکاؤنٹس میں 2 آف شور کمپنیوں کے ذریعے غیر قانونی طور پر پیسہ بیرونِ ملک سے پاکستان منتقل ہوا۔ لہٰذا تحریکِ انصاف کے تمام عہدیداران جلسے جلوسوں اور دیگر سیاسی سرگرمیوں میں جو رقم استعمال کرتے رہے وہ ممنوعہ ذرائع سے حاصل کی گئی تھی۔ الیکشن کمیشن میں دلائل کے دوران پی ٹی آئی کے وکیل انور منصور نے اعتراف کیا کہ 2010ء میں پی ٹی آئی امریکا میں رجسٹرڈ ہوئی، ڈونیشن پالیسی اور چیئرمین پی ٹی آئی کا خط اسکروٹنی کمیٹی دستاویزات میں لگا ہے جس میں لکھا ہے کہ سینٹرل فنانس کمیٹی کی اجازت کے بغیر کوئی فنڈنگ ہوئی تو پی ٹی آئی ذمے دار نہیں- تاہم چیئرمین پی ٹی آئی نے لیٹر میں لکھا ہے کہ لوگ پی ٹی آئی کے نام پر پیسہ اکھٹا کر رہے ہیں جس کا انہوں نے سختی سے نوٹس لیا۔ جنوری 2022میں غیر قانونی فنڈنگ کیس میں اسکروٹنی کمیٹی کی رپورٹ میں انکشاف ہوا کہ 2009 سے 2013 کے دوران پارٹی کی آمدن اور اخراجات آپس میں مطابقت نہیں۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا کہ پی ٹی آئی نے 5 سال کے عرصے میں 320 ملین روپے کے فنڈز چھپائے۔پی ٹی آئی نے 2008-2009 کے دوران دو بینکوں کے بینک اکاؤنٹس ظاہر نہیں کیے کیونکہ 77 میں سے صرف 12 اکاؤنٹس سامنے آئے تھے۔آڈٹ فرم کی طرف سے فراہم کردہ نقدی رسیدیں بھی بینک کھاتوں سے مطابقت نہیں رکھتیں۔ آئین میں سیاسی پارٹیز آرڈر 2002ء کی دفعہ 13 کے تحت سیاسی پارٹیوں کو کوئی رقم کہاں سے حاصل ہوئی، اثاثہ جات کیا ہیں اور ان پر قرض اور واجبات کی تمام تر تفصیلات اور بینک اکاؤنٹ کی آڈٹ رپورٹ الیکشن کمیشن میں جمع کروانا ضروری ہے۔ ہر سیاسی پارٹی کے سربراہ پر یہ لازم ہوتا ہے کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان میں ایک سرٹیفکیٹ جمع کروائے جس میں یہ تحریر ہوتا ہے کہ تمام تر مالی تفصیلات درست فراہم کی گئی ہیں اور ان میں کسی قسم کا تضاد، بے ضابطگی یا بدعنوانی نہیں پائی جاتی۔ پولیٹیکل پارٹیز آرڈر 2002ء کی شق 15 کے تحت وفاقی حکومت کو اختیار دیا گیا ہے کہ ایسی کسی بھی سیاسی جماعت کو تحلیل کرنے کا ڈیکلریشن جاری کرے جسے غیر ملکی فنڈز دئیے جاتے ہوں یا وہ پاکستان کے خلاف اقدامات بشمول  انتشار پھیلانے میں مصروف ہو۔اس حوالے سے سیاسی ماہرین کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی کی غیر ملکی ممنوعہ فنڈنگ کے حقائق سامنے آنے پر پی ٹی آئی کو کالعدم قرار دیا جاسکتا ہے اور عین ممکن ہے کہ پی ٹی آئی کے کالعدم ہونے کی صورت میں عمران خان نئے نام سے اپنی جماعت کو رجسٹرڈ کروالیں گے۔

About Admin

Check Also

قبل از وقت انتخابات ہوئے تو کون سی جماعت فائدے میں رہے گی؟ سیاسی ماہرین نے عوام کو صاف صاف بتا دیا

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) پاکستان میں جاری سیاسی و معاشی بحران کے تناظر میں بعض ماہرین …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *